سٹیزن شپ بل منظوری کے بعد دس لاکھ سے زائد مسلمانوں نے مغربی بنگال ریاست کا بھارت سے زمینی رابطہ منقطع کردیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق بھارت میں شہریت کے قانون کے بل میں ترمیم کے بعد ریاست بنگال میں مسلمانوں نے احتجاج شروع کردیا ہے ۔
جس کے بعد فسادات پھوٹ پڑے ہیں جن میں متعدد ریلوےاسٹیشن تباہ ہوگئے ہیں۔ جبکہ 25 سے زائد ٹرینیں منسوخ ہوگئی ہیں اور 22 ٹرینوں کو مختلف مقامات پر روک لیا گیا ہے ۔
بھارت نے ان فسادات کا الزام بنگلہ دیش پر لگایا ہے بھارت بھر میں شہریت کے قانون میں ترمیم کے بعد ہر طرف فسادات میں جنم لے لیا ہے۔ جبکہ اس حوالے سے بھارت نے سارا ملبہ بنگلہ دیش ڈالا ہے۔
دوسری جانب ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ یہ تو ابھی آغاز ہے مقبوضہ جموں و کشمیر میں ہندوتوا کے خلاف زبردست طوفان کو کوئی نہیں روک سکے گا ۔اور ہندوستان میں اس طرح کی چال چلنا چھوڑ دی جائے۔
خیال رہے کہ بھارت میں شہریت کے حوالے سے قانون سازی کی جارہی ہے اور اس حوالے سے بل کی ترمیم کئے جانے کے خلاف مسلمانوں کے احتجاج کے خلاف بھارت نے ٹویٹر پر آئی ايم مسلم کے نام سے ایک ٹرینڈ چلایا ہے جس میں لوگ خود کو مسلمان ظاہر کر کے بل کی مخالفت کرنے والوں کی مذمت کر رہے ہیں۔
بھارت بھر میں ٹويٹر صارفین میں بھی مسلمان ہوں کے ٹويٹ کر کے شہريت کے بل ميں ترميم کے حق ميں آواز اٹھا رہے ہيں۔
اس ٹويٹر کے ٹرينڈ کے متعلق آصف غفور کا کہنا ہے کہ بھارت کی ایسی چالیں ناکام ہو جائیں گی۔
سٹیزن شپ بل منظوری کے بعد دس لاکھ سے زائد مسلمانوں نے مغربی بنگال ریاست کا بھارت سے زمینی رابطہ منقطع کردیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق بھارت میں شہریت کے قانون کے بل میں ترمیم کے بعد ریاست بنگال میں مسلمانوں نے احتجاج شروع کردیا ہے ۔