نجی ٹی وی چینل کے ایک پروگرام میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان اسمبلیاں تحلیل کرنے پر غور کر رہے ہیں۔ حکومت کی اتحادی جماعتیں اپوزیشن کے ساتھ مل کر ان ہاؤس تبدیلی کا سوچ رہی ہے ۔اس کوشش کو ناکام بنانے کے لیے وزیر اعظم عمران خان اسمبلی تحلیل کر دیں گے۔
تفصیلات کے مطا بق نجی ٹی وی چینل کے ایک پروگرام میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان اپنی اتحادی جماعتوں کی جانب سے اپوزیشن سے روابط قائم کرنے اور ان ہاؤس تبدیلی کر نے کی کوششیں کیے جانے کے معاملے سے مکمل طور پر آگاہ ہیں ۔وزیراعظم عمران خان نے اپنی اتحادی جماعتوں کی کسی بھی قسم کی بلیک میلنگ سے بچنے کے لیے جوابی قدامات اٹھانے کے لیے تیار ہیں۔
اگر اتحادی جماعتوں نے اپوزیشن کے ساتھ ہا تھ ملا کر ان ہائوس میں کوئی بھی تبدیلی لانے کی کوشش کی تو وزیراعظم عمران خان اسمبلی تحلیل کرکے نئے الیکشن کی طرف چلے جائیں گے ۔اس حوالے سے سینئر صحافی اور تجزیہ کار صابر شا کر نے نجی ٹی وی چینل کے پروگرام سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت کی اتحادی جماعتوں کی جانب سے دیئے جانے والے بیانات عندیہ دے رہے ہیں کہ یہ جماعتیں اب حکومت کے ساتھ نہیں چل سکتیں۔اور حکومت کے ساتھ ہاتھ کر کے اپوزیشن کے ساتھ ہاتھ ملانے کی تیاری کر رہی ہیں۔ اطلاعات بھی ہیں کہ ان ہائوس تبدیلی کے لیے کو ششیں کی جا رہی ہیں۔ اپو زیشن جما عتی حکومت کی حکومت اتحادی جماعتوں کو اپنے ساتھ مل کر اب ہا ئو س تبدیلی لانے کی کوشش کر رہی ہے ۔
ا پو زیشن جماعتوں کا موقف ہے کہ عمران خان کو ااقتدار سے ہٹا کر آپس میں مل بانٹ کر کھائیں گے ۔صابر شا کر کا کہنا ہے کہ ایک جانب مسلم لیگ ”ق” نے نواز شریف کی وا ضح حمایت کرتے ہوئے حکومت سے کہہ رہے ہیں کہ انہیں بیرون ملک جانے دیں ۔ جبکہ دوسری جانب ایم کیو ایم اس پر درخواست کرنے کی بجائے حکومت سے مطالبہ کر رہے ہیں کہ نواز شریف کو بیرون ملک جانے کی اجازت دی جائے۔
صابر شاکر کا کہنا ہے کہ حکومت کی اتحادی جما عتیں وزیراعظم عمران خان کو بلیک میل کرنے کوشش کررہی ہیں۔ اتحادی جماعتیں حکومت میں وزیر کا حصہ چاہتی ہیں۔ بصو رت دیگر یہ اتحادی جما عتیں اپوزیشن کے ساتھ ہاتھ ملا کر ان ہائوس تبدیلی کی کو ششیں کریں گی۔ جبکہ وزیراعظم عمران خان اس سب صورت حال کا بخوبی ادراک ہے۔ اور اس حوالے سے اگلے چند روز بہت اہم ہوں گے ۔